صیہونی ریاست کا غزہ پر بمباری کا سلسلہ مزید تیز ہوگیا: بچوں سمیت 34 فلسطینی شہید

news-details

غزہ: (منگل:30 اپريل2024ء) جنگ بندی کی کوششوں اور عالمی فوجداری عدالت کے اسرائیلی وزیراعظم کے ممکنہ وارنٹِ گرفتاری کی خبروں کے دوران صیہونی ریاست کی غزہ پر بمباری کا سلسلہ مزید تیز ہوگیا۔

گزشتہ 24 گھنٹوں میں اسرائیلی فوج نے نوصیرات پناہ گزین کیمپ اور غزہ شہر میں ڈرونز کے ذریعے بمباری کی جس کے نتیجے میں خواتین اور بچوں سمیت 34 فلسطینی شہید اور متعدد زخمی ہوگئے۔ دوسری جانب وسطی غزہ میں حماس کے ساتھ ہونے والی ایک جھڑپ میں اسرائیلی فوج کے دو اہلکار 37 سالہ کلکدان مہر اور 28 سالہ ادو ابیب مارے گئے۔ حماس کے بقول ان اہلکاروں کو گھات لگا کر نشانہ بنایا گیا۔

اس طرح غزہ میں دوبدو لڑائی کے دوران مارے جانے والے اسرائیلی فوجیوں کی تعداد 600 سے تجاوز کرگئی جب کہ 7 اکتوبر کو حماس کے اسرائیل پر حملے میں ہزار سے زائد اہلکار مارے گئے تھے۔ غزہ میں 40 دن کی جنگ بندی کے لیے عالمی قیادت متحرک ہے۔ اسرائیلی نمائندوں سے مذاکرات کے لیے حماس کی قیادت قاہرہ میں موجود ہے لیکن اب تک سیز فائر پر اتفاق نہیں ہوسکا۔

ادھر امریکی وزیر خارجہ مشرق وسطیٰ کے اپنے اہم دورے پر گزشتہ روز سعودی عرب پہنچے اور 4 عرب ممالک کے وزرائے خارجہ سے ملاقات کی جس میں غزہ میں جنگ بندی اور اس کے بعد بننے والی حکومت کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا گیا۔ امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن یورپی ممالک کے ہم منصوبوں سے بھی ملاقات کریں گے جس میں غزہ کے تباہ حال گھروں اور انفرا اسٹریکچر کی بحالی کے منصوبے پر بات چیت ہوگئی۔

انٹونی بلنکن کے اس دورے کا آخری پڑاؤ اسرائیل ہوگا جہاں وہ اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو سے ملاقات کریں گے۔ اس دوے کا مقصد عرب ممالک اور یورپی ممالک سے ہونے والے مذاکرات پر اسرائیل کو اعتماد لینا ہے۔ یاد رہے کہ اسرائیل کی 7 اکتوبر سے جاری وحشیانہ بمباری میں شہید ہونے والے فلسطینیوں کی تعداد 34 ہزار 488 ہوگئی جب کہ 77 ہزار سے زائد زخمی ہیں۔ شہید اور زخمی ہونے والوں میں نصف تعداد خواتین اور بچوں کی ہے۔